مقبوضہ فلسطین

فلسطینی استقامتی محاذ انتقام کے لئے تیار، 24 گھنٹے میں 22 بار صیہونیوں کو نشانہ بنایا گیا

شیعیت نیوز: فلسطینی استقامتی محاذ کی کارروائیوں میں شدت آتی جا رہی ہے یہاں تک کہ گذشتہ چوبیس گھنٹے کے دوران بائیس بار صیہونی فوجیوں کو نشانہ بنایا گیا ہے۔

شہاب نیوز کی رپورٹ کے مطابق فلسطینی استقامتی محاذ نے گزشتہ چوبیس گھنٹے کے اندر صیہونی فوجیوں کو بارہا غرب اردن اور مقبوضہ بیت المقدس کے مختلف علاقوں میں نشانہ بنایا ہے۔ اس خبر کی تصدیق کرتے ہوئے فلسطینی انفارمیشن سینٹر معطی نے اعلان کیا ہے کہ صیہونی فوجیوں پر گولیاں چلائی گئی ہیں اور دھماکہ خیز مادوں سے ٹارگیٹ کیا گیا ہے۔

رپورٹ کے مطابق، سلفیت، قلقیلیہ، جنین، بیت لحم، الخلیل، رام اللہ، نابلس اور طولکرم وہ علاقے تھے جہاں غاصب فوجیوں کو سب سے زیادہ نشانہ بنایا گیا اور صیہونیوں کے حملوں کا مقابلہ کیا گیا۔

فلسطینی استقامتی محاذ کے مجاہدوں نے طولکرم میں واقع حرمیش یہودی کالونی کو گولیوں سے نشانہ بنایا اور الخلیل کے مضافات میں صیہونی آبادکاروں کو لے جانے والی ایک بس پر فائرنگ کی۔

یہ بھی پڑھیں : شرم شیخ سربراہ اجلاس کو مسترد کرتے ہیں، موسیٰ ابو مرزوق

ان حملوں کو جنین پر غاصب فوجیوں کے حملوں کا جواب قرار دیا گیا ہے۔

قابل ذکر ہے کہ صیہونی فوجیوں نے جمعرات کو جنین پر دھاوا بول کر چار فلسطینیوں کو شہید کیا تھا۔

دوسری جانب جہاد اسلامی فلسطین کی مسلح ونگ سرایا القدس نے گذشتہ رات صیہونیوں کے اس حملے پر ردعمل ظاہر کیا۔ سرایا القدس کے بیان میں آیا ہے کہ غاصب فوجیوں کو اپنی اس گھناؤنی حرکت کی سزا بھگتنا پڑے گی۔

ادھر اسلامی استقامتی تنظیم حماس نے فلسطینی عوام سے اپیل کی ہے کہ شہیدوں کے خون سے اعلان وفاداری کرتے ہوئے غاصب فوجیوں اور مسلح آبادکاروں کا ہر طرح سے مقابلہ کرنے کے لئے تیار ہوجائیں۔

قابل ذکر ہے کہ مقبوضہ سرزمینوں بالخصوص غرب اردن کے حالات انتہائی پیچیدہ ہوچکے ہیں اور استقامتی محاذ کے مکمل طور پر متحرک ہوجانے کے پیش نظر ماہرین کا خیال ہے کہ حالات تل ابیب کے حق میں دکھائی نہیں دے رہے ہیں۔

متعلقہ مضامین

Back to top button