یمن

اقوام متحدہ صافر آئل ٹینکر معاہدے پر عمل درآمد کے لیے پرعزم ہے، صنعا حکومت

شیعیت نیوز: صنعا حکومت سے وابستہ صافر آئل ٹینکر کے بحران کے حل کے معاہدے پر عمل درآمد کی نگرانی کرنے والی کمیٹی نے اس بات پر زور دیا کہ اقوام متحدہ نے دو ماہ گزر جانے کے باوجود بحران کے حل کے لیے کوئی ایکشن پلان پیش نہیں کیا۔ معاہدے پر دستخط ہونے کے بعد سے گزر چکے ہیں۔

المیادین نیوز نیٹ ورک کے مطابق، محفوظ آئل ٹینکر معاہدے پر عمل درآمد کی نگرانی کرنے والی کمیٹی، صنعا حکومت نے 5 مارچ کو دستخط کیے گئے مفاہمت کی یادداشت کی شقوں پر عمل درآمد کرنے میں اقوام متحدہ کی ناکامی پر ’’افسوس اور مایوسی‘‘ کا اظہار کیا۔

یہ بھی پڑھیں : بین الاقوامی میڈیا تنظیموں کا اسرائیل پر صحافی ابو عاقلہ کے ’دانستہ قتل‘ کا الزام

کمیٹی نے ایک بیان میں کہا کہ اس حقیقت کے باوجود کہ مفاہمت کی یادداشت پر دستخط ہوئے دو ماہ سے زیادہ کا عرصہ گزر چکا ہے، اقوام متحدہ نے وہ ایکشن پلان پیش نہیں کیا ہے جس کا اس نے تیل کے بحران کو حل کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

کمیٹی نے مزید کہا کہ اقوام متحدہ کی طرف سے مفاہمت کی یادداشت کی شقوں پر عمل درآمد نہ ہونے کی صورت میں اس منصوبے کے لیے کسی بھی رقم کی مختص رقم اقوام متحدہ خود برداشت کرے گی۔ جیسا کہ تشخیص کے عمل اور دیکھ بھال کے لیے پچھلی رقموں کا معاملہ تھا۔

صافر آئل ٹینکر بحران کے حل کے معاہدے پر عمل درآمد کی نگرانی کرنے والی کمیٹی نے اقوام متحدہ سے اپنے مطالبے کا اعادہ کیا کہ بحیرہ احمر میں ممکنہ تباہی کی شدت کی روشنی میں ٹینکر کے ذخائر کی مسلسل قابل رحم حالت کے پیش نظر ضروری اقدامات اٹھائے،

5 مارچ کو صنعا کی یمنی حکومت نے صافر ٹینکر کی صورتحال سے نمٹنے کے لیے اقوام متحدہ کے ساتھ مفاہمت کی ایک یادداشت پر دستخط کیے تھے۔

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close