لبنان

لبنانی لڑکی نے عالمی ٹیبل ٹینس مقابلوں میں صہیونی حریف سے مقابلہ کرنے سے انکار کردیا

شیعیت نیوز: لبنانی لڑکی نے پرتگال میں عالمی ٹیبل ٹینس مقابلوں میں اپنی صہیونی حریف کے سامنا کرنے سے انکار کر دیا۔

11 سالہ لبنانی لڑکی بیسان شیری نے فلسطینی قوم کی حمایت اور قابض حکومت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کی مخالفت کی علامت میں قرعہ اندازی کے مطابق صیہونی حریف کا مقابلہ کرنے سے انکار کرتے ہوئے پرتگال میں ہونے والی ٹیبل ٹینس چیمپئن شپ سے دستبرداری اختیار کرلی۔

قابل ذکر ہے کہ اس کھیلاڑی سے پہلے کچھ لبنانی کھیلاڑیوں، "سالی حمادہ”، "ماغی قاسم فواز، "شربل ابوظاہر” اور”عبداللہ منیاتو” نے بھی اپنے صہیونی حریف کے مقابلے سے انکار کیا تھا۔

اس رپورٹ کے مطابق ان لبنانی کھلاڑیوں کے اقدامات کا مقصد مظلوم فلسطینی لوگوں کی حمایت اور صہیونی ناجائز حکومت کے ساتھ تعلقات کو معمول پر لانے کی مخالفت کرنا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : فیفا 2022 قطر ورلڈ کپ اور غاصب اسرائیل کے خلاف عالمی نفرت کا مظاہرہ

دوسری جانب گزشتہ موسم گرما میں منعقد ہونے والے مختلف بین الاقوامی مقابلوں میں عرب کھلاڑیوں کی جانب سے اسرائیلی حریفوں کا مقابلہ کرنے سے انکار کے بعد اس بار ورلڈ کپ میں لبنانی شائقین نے صہیونی رپورٹر کو سخت جواب دیا جو ان کا انٹرویو لینا چاہتا تھا۔

قطرمیں ہونے والے فٹ بال ورلڈ کپ کے پہلے دن لبنانی نوجوانوں نے صیہونی صحافیوں کو انٹرویو دینے سے انکار کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ اسرائیل نام کی کوئی چیز نہیں ہے۔

اس حوالے سے عبرانی میڈیا نے خبر دی کہ قطر میں 2022 کے ورلڈ کپ میں لبنانی شائقین کو جب یہ معلوم ہوا کہ ان کا انٹرویو کرنے والا رپورٹر اسرائیلی ہے تو انہوں نے انٹرویو دینے سے انکار کردیا۔

صیہونی حکومت کے 12 ٹی وی چینل کے رپورٹر نے، جس نے لبنانی شائقین سے بات کرنے کی کوشش کی، اعلان کیا کہ جب لبنانی نوجوانوں کو معلوم ہوا کہ ایک اسرائیلی رپورٹر ان سے بات کر رہا ہے، تو انہوں نے فوری طور پر انٹرویو روک دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ اس وقت ہم ورلڈ کپ میں ہیں اور میں کہہ سکتا ہوں کہ بولنے والے تقریبا تمام لوگ جن سے ہم اپنا تعارف کراتے ہیں، وہ ہمیں انٹرویو دینے سے انکار کرتے ہیں، لبنانی نوجوانوں کا ایک گروپ تھا جس کا ہم انٹرویو کرنا چاہتے تھے لیکن جب انہیں پتہ چلا کہ ہم اسرائیلی ہیں تو ان کے رویے میں 180 ڈگری تبدیلی آگئی۔

اس صہیونی صحافی نے اپنی بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ لبنانی نوجوانوں نے اسرائیل کے وجود کو تسلیم کرنے سے انکار کیا اور اس بات پر زور دیا کہ اسرائیل نام کی کوئی چیز نہیں ہے بلکہ اس سرزمین کا نام فلسطین ہے۔

متعلقہ مضامین

Back to top button