عراق

عراق، ایرانی و سعودی نقطۂ نظر کو قریب لانے میں کامیاب رہا ہے، مصطفی الکاظمی

شیعیت نیوز: عراقی وزیراعظم مصطفی الکاظمی نے اپنے ایک بیان میں اعلان کیا ہے کہ بغداد، تہران و ریاض کے نقطہ ہائے نظر کو قریب لانے میں کامیاب رہا ہے۔

عراقی سرکاری خبررساں ایجنسی واع کے مطابق مصطفی الکاظمی نے کہا کہ وہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں اپنے خطاب میں تاکید کریں گے کہ عراق، ایران و سعودی عرب سمیت کئی ایک ممالک کو ایک دوسرے کے قریب لانے میں کامیاب رہا ہے جس کے سبب ان ممالک کے درمیان دوستانہ تعلقات بحال ہوئے ہیں۔

اپنے بیان میں عراقی وزیراعظم مصطفی الکاظمی نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ عالمی رہنماء، خطے کے امن و استحکام کی برقراری میں عراقی کردار کی اہمیت پر اتفاق نظر رکھتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ میں ملکی سیاسی قوتوں سے مطالبہ کرتا ہوں کہ وہ عراق کے حوالے سے اپنی تاریخی ذمہ داریوں پر عملدرآمد کرتے ہوئے عراقی قومی گفتگو کے حالیہ موقع سے فائدہ اٹھائیں اور ملکی تعمیر میں اپنا موثر حصہ ڈالیں۔

اس حوالے سے اپنے گفتگو کے آخر میں مصطفی الکاظمی نے کہا کہ خطے کا امن و استحکام، عراقی صورتحال پر مثبت طور پر اثر انداز ہوتا ہے لہذا ہم ہر اس سلسلے کی کھل کر حمایت کریں گے جو خطے کے استحکام میں ممد و معاون ثابت ہو۔

یہ بھی پڑھیں : ایران اپنی خودمختاری کی خلاف ورزی کرنے کی کوششوں کا جواب دے گا، ناصر کنعانی

دوسری جانب عراق کے وزیر خارجہ فواد حسین نے تاکید کی ہے کہ بغداد دنیا کے مختلف ممالک کے ساتھ بہترین تعلقات قائم کرنا چاہتا ہے۔

اس رپورٹ کے مطابق عراقی وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ فواد حسین نے نیویارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 77ویں اجلاس کے موقع پر اپنے سعودی ہم منصب فیصل بن فرحان سے ملاقات کی۔

اس بیان کے مطابق سعودی عرب اور عراق کے وزرائے خارجہ کے درمیان ہونے والی ملاقات میں بغداد اور ریاض کے درمیان دوطرفہ تعلقات اور دونوں ممالک کے مفادات کو پورا کرنے کے لیے ان میں بہتری لانے کے طریقوں پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

عراقی وزارت خارجہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ دونوں فریقوں نے صورتحال کو پرسکون کرنے اور ریاض اور تہران کے درمیان کشیدگی کو کم کرنے کے لیے بغداد کی کوششوں پر بھی بات کی۔

عراق کے وزیر خارجہ نے اس بات پر بھی زور دیا کہ یہ ملک دنیا کے مختلف ممالک بالخصوص عرب ممالک اور پڑوسیوں کے ساتھ مشترکہ مفادات کے مطابق اور مشترکہ خطرات کا سامنا کرتے ہوئے بہترین تعلقات قائم کرنا چاہتا ہے۔

ساتھ ہی فواد حسین نے بات چیت کے ذریعے خطے میں استحکام کی واپسی اور ملکوں کے اندرونی معاملات میں عدم مداخلت کی کوششوں کو تیز کرنے پر زور دیا۔

عراقی وزیر خارجہ نے داعش کے دہشت گرد گروہوں کی باقیات سے نمٹنے کے لیے سیکورٹی ہم آہنگی کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

متعلقہ مضامین

Back to top button