اہم ترین خبریںعراق

عراق، کاظمین میں سیکورٹی کے سخت انتظامات ، عزاداروں کا سیلاب

شیعیت نیوز: آسمان امامت و ولایت کے نویں درخشاں ستارے فرزند رسول حضرت امام محمد تقی علیہ السلام کی جانگداز شہادت کے موقع پرکاظمین میں سیکورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے ہیں۔

عراقی کی وزارت دفاع کے مطابق فرزند رسول حضرت امام محمد تقی علیہ السلام کی شہادت کے موقع پر بڑی تعداد میں عزادار اور سوگوار کاظمین میں روضہ مقدس میں حاضری دیتے ہیں، اسی کے پیش نظر پورے شہر میں سیکورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے ہیں۔

عراق کی وزارت دفاع اور وزارت داخلہ کی جانب سے الگ الگ بیان جاری کرکے اس موقع پر سیکورٹی کے سخت انتظامات کی یقین دہانی کرائی گئی ہے۔

دوسری جانب فرزند رسول حضرت امام محمد تقی علیہ السلام کی شب شہادت کے موقع پر ایران اور پوراعالم اسلام سوگوار ہے۔

فرزند رسول حضرت امام محمد تقی علیہ السلام کی شہادت کی مناسبت سے  ایران اور دنیا کے مختلف ملکوں میں مجالس غم برپا ہیں۔

یہ بھی پڑھیں : امام تقی الجواد علیہ السلام کے روز شہادت کی مناسبت سے علامہ راجہ ناصرعباس جعفری کا تعزیتی پیغام

حضرت جواد الائمہ علیہ السلام کی شب شہادت کی مناسبت سے ایران سراپا سوگوار و عزادار ہے جبکہ عراق اور خاص طور پر عراق کے مقدس شہر کاظمین میں جہاں امام محمد تقی علیہ السلام کا روضہ اقدس واقع ہے عراق کے سبھی شہروں اور اسی طرح ایران اور دنیا کے مختلف ممالک سے لاکھوں زائرین عزاداری کر رہے ہیں اور ان کی غم انگیز شہادت پر آنسو بہا رہے جبکہ ایران کے شہر مشہد مقدس میں آپ کے والد بزرگوار حضرت امام رضا علیہ السلام کے حرم مطہر اور قم المقدسہ میں آپ کی عمہ گرامی حضرت فاطمہ معصومہ سلام اللہ علیہا کے حرم مطہر میں بھی مجالس عزا جاری ہیں جہاں دسیوں ہزار سوگوار و زائرین نوحہ و ماتم میں مصروف ہیں اور اس المناک شہادت پر ان عظیم ہستیوں کو پرسہ پیش کر رہے ہیں۔

فرزند رسول حضرت امام محمد تقی علیہ السلام کو سن دو سو بیس ہجری قمری میں ذی القعدہ کی آخری تاریخ کو ظالم حاکم معتصم نے زہر دے کر شہید کر دیا تھا اور امامت کی سنگین ذمہ داری آپ کے فرزند حضرت امام علی نقی علیہ السلام کے کاندھوں پر آن پڑی۔

حضرت امام محمد تقی علیہ السّلام کو کمسنی ہی میں مصائب اور آلام کا سامنا کرنا پڑا اور باپ کی محبت و شفقت سے محروم ہو گئے تھے۔

آپ کی عمرمبارک صرف پانچ برس تھی جب حضرت امام رضا علیہ السّلام مدینہ سے خراسان کی طرف سفر کرنے پرمجبور ہوئے تو پھر زندگی میں ملاقات کا موقع نہ ملا امام محمد تقی علیہ السّلام سے جدا ہونے کے تیسرے سال امام رضا علیہ السّلام کی شہادت ہو گئی۔

متعلقہ مضامین

Back to top button