اہم ترین خبریںیمن

عرب امارات، امریکہ سے بھیک مانگ رہا ہے، امریکی بیساکھی کا کوئی فائدہ نہیں ہوگا، انصار اللہ

شیعیت نیوز: تحریک انصار اللہ کے ترجمان اور سینئر مذاکرات کار محمد عبد السلام نے ٹوئٹ کیا کہ متحدہ عرب امارات کو اپنے پیروں پر کھڑے ہونے کے لئے امریکی بیساکھی کی ضرورت ہے۔

فارس نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق یمن کی عوامی تحریک انصار اللہ کا کہنا ہے کہ متحدہ عرب امارات، امریکہ سے بھیک مانگ رہا ہے۔

محمد عبدالسلام نے بدھ کے روز ٹویٹر پر لکھا کہ یمن پر حملہ کرنے والے ممالک داخلی سلامتی کے بحران کی حالت میں ہیں، جیسا کہ متحدہ عرب امارات کی صورتحال ہے۔ اس لیے وہ امریکی چھڑی کے علاوہ اپنے دو پاؤں پر کھڑا نہیں ہو سکتا۔ وہ امریکی حمایت کی بھیک مانگنے کی کوشش کر رہا ہے۔ لیکن یمنی دلدل سے حقیقی نکلنے کے ساتھ، اس ملک کو اس کی ضرورت نہیں ہے۔ ورنہ، کوئی مدد مفاد میں نہیں ہو گی، اور جب تک وہ یمن پر اپنے حملے جاری رکھے گا، کوئی سلامتی حاصل نہیں ہو گی۔

یہ بھی پڑھیں : دہشت گرد گروہ داعش کے خفیہ ٹھکانوں پر عراقی فضائیہ کی بمباری

یمن پر متحدہ عرب امارات کی جارحیت کو روکنے کے بارے میں صنعا کے متعدد حکام اور عہدیداروں کی جانب سے بیانات اور وارننگ کا سلسلہ بدستور جاری ہے۔

یمن کی قومی سالویشن حکومت کے سینئر مذاکرات کار اور تحریک انصار اللہ کے ترجمان محمد عبد السلام نے ٹوئٹ کیا کہ یمن پر جارحیت کرنے والے کچھ اتحادی ممالک، اپنے سیکورٹی بحران سے غمزدہ ہیں جیسے متحدہ عرب امارات جو امریکی بیساکھی کی مدد کے بغیر کھڑا بھی نہیں ہو پاتا اور امریکہ سے حمایت کی بھیک مانگنے کی کوشش کر رہا ہے۔

محمد عبد السلام نے کہا کہ متحدہ عرب امارات کو یمن کی دلدل سے صحیح طریقے سے نکلنے کے لئے امریکہ کی حمایت کی بھیک کی ضرورت نہیں ہے لیکن یمن پر اس کی جارحیت جاری رہنے کی صورت میں کوئی بھی حمایت اس کے لئے فائدہ مند ثابت نہیں ہوگی اور یہ ملک سیکورٹی اور امن کا خواب بھی نہیں دیکھ پائے گا۔

متحدہ عرب امارات، جو گزشتہ ایک سال سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں ایک نشست پر فائز ہے، نے سلامتی کونسل اور عرب لیگ دونوں میں، انصار اللہ تحریک کو دہشت گردی کی فہرست میں شامل کرنے کے لیے پوزیشن استعمال کرنے کی کوشش کی ہے ، لیکن ناکام رہی۔

متعلقہ مضامین

Back to top button