یمن

سعودی اور اماراتی فورسز کے کنٹرول والی الضبہ بندر گاہ پر ڈرون حملہ

شیعیت نیوز: یمنی ذرائع کا کہنا ہے کہ حضر موت میں واقع الضبہ بندر گاہ پر جو سعودی اور اماراتی فورسز کے کنٹرول میں ہے دھماکہ ہوا ہے۔

الخبر الیمنی نے مقامی ذرائع کے حوالے سے خبر دی ہے کہ ایک ڈرون نے الضبہ بندر گاہ کو نشانہ بنایا ہے۔ یہ حملہ ایک غیر ملکی آئل ٹینکر کے آنے کے فورا بعد ہوا ہے۔

یمنی فورسز کے آپریشن روم کے مطابق سعودی عرب الحدیدہ سمیت یمن کے مختلف علاقوں میں جاسوس ڈرون طیاروں کا استعمال کر رہا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : یمن میں ایک یمنی عبداللہ صالح کو سزائے موت اور 12 امریکی سفارت کاروں کو قید کر دیا گیا

دوسری جانب بارودی سرنگوں کو ناکارہ بنانے والے یمنی مرکز نے اپنی تازہ ترین رپورٹ میں کہا ہے کہ اب تک دوسو سے زائد بچے سعودی عرب اور اسکے اتحادیوں کی بچھائی ہوئی بارودی سرنگوں کی زد میں آکر اپنی جان سے ہاتھ دھو چکے ہیں۔

یمن کے المسیرہ ٹی وی کے مطابق یمن میں سرگرم بارودی سرنگوں کو ناکارہ بنانے والے مرکز کے بیان میں آیا ہے کہ ایسے عالم میں کہ جب دنیا چلڈرنس ڈے منا رہی ہے، یمنی بچے اپنے اُن ابتدائی ترین حقوق کی تلاش میں ہاتھ پیر مار رہے ہیں جنہیں سعودی عرب اور اسکے اتحادیوں کی آٹھ سالہ جارحیت کے دوران مکمل طور پر بھلا دیا گیا ہے، انکے گھروں اور اسکولوں میں انہیں نشانہ بنایا ہے اور بچپن کے شیریں تصور کا انکے دلوں میں خون کر دیا ہے۔

مذکورہ یمنی مرکز کی رپورٹ میں آیا ہے کہ اس وقت میں لاکھوں بچے غذا، تعلیم اور صحت کے اپنے ابتدائی ترین حقوق سے محروم ہیں اور انکے رنج و غم میں سعودی اتحاد کی بچھائی ہوئی بارودی سرنگوں اور انکے سروں پر گرنے والے بمبوں نے اور زیادہ شدت پیدا کر دی ہے۔

رپورٹ میں مزید آیا ہے کہ اقوام متحدہ گزشتہ آٹھ برسوں کے دوران یمن کے خلاف جنگ اور محاصرے کا خاتمہ کروانے میں ناکام رہا اور نتیجہ یہ ہوا ہے کہ رواں سال کے دوران کم از 145 بچے جارح سعودی اتحاد کی بارودی سرنگوں اور بمبوں کی زد پر آکر موت کی نیند سو گئے۔

اس سے قبل اس مرکز کی رپورٹ میں آیا تھا کہ رواں سال کے دوران سعودی عرب کی بارودی سرنگوں اور کلسٹر بموں کا شکار ہو کر 219 عام شہری شہید اور 400 سے زائد زخمی ہو چکے ہیں۔

متعلقہ مضامین

یہ بھی ملاحظہ کریں
Close
Back to top button