اہم ترین خبریںمقبوضہ فلسطین

قیدیوں کو قید تنہائی میں ڈالنا قابض دشمن کا انتقامی حربہ ہے، اسلامی جہاد

شیعیت نیوز: اسلامی جہاد نے اسرائیلی جیلوں میں قید ان چھ فلسطینیوں کو قید تنہائی میں ڈالنے کی مذمت کی ہے جنہیں گذشتہ ماہ انتہائی سیکیورٹی والی جیل ’جلبوع‘ سے فرار کے بعد دوبارہ گرفتار کرلیا گیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق اسلامی جہاد کے رہنما یاسر مزھر نے کہا کہ ہمیں اسرائیلی دشمن کی طرف سے جلبوع جیل سے فرار ہونے والے چھ فلسطینی اسیران کو قید تنہائی میں ڈالنے کے فیصلے پر حیرت نہیں۔ جب سے فلسطینی اسیران  جلبوع جیل سے فرار ہوئے تھے قابض دشمن کی طرف سے اسیران کی آزادی سلب کرنے کے مکروہ ہتھکنڈوں میں اضافہ ہوگیا تھا۔

مزھرنے صوت القدس ریڈیو سے بات کرتے ہوئے کہا کہ قابض اسرائیلی دشمن عام اسیران سے بھی انتقام لے رہے ہیں مگر اسلامی جہاد کے اسیران کے ساتھ خصوصی طورپر انتقامی کارروائیاں ہو رہی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ اسرائیلی جیل انتظامیہ اور صیہونی انٹیلی جنس ادارے ’شاباک‘ نے مل کر اسیران کا جینا حرام کررکھا ہے۔ جیل سے فرار کی کوشش کرنے والے چھ فلسطینی اسیران کو ’موت کےقید خانوں‘ میں ڈال رکھا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : افغانستان میں طالبان حکومت کا قیام، پاکستان میں وہابی دہشتگرد تنظیموں کی مبینہ ریاستی سرپرستی کا دوبارہ آغاز

واضح رہے کہ صیہونی حکام نے ستمبر کے اوائل میں سرنگ کے ذریعے ’جلبوع‘ جیل سے فرار کے بعد دوبارہ گرفتار کیے گئے تمام چھ فلسطینیوں کو قید تنہائی میں ڈال دیا تھا۔

فلسطینی قیدیوں کے وکیل ایڈووکیٹ خالد محاجنہ نے بتایا کہ ان کے موکل اسیر محمد عارضہ کو قید تنہائی میں ڈالا گیا تھا۔

محاجنہ نے بتایا کی محمد عارضہ سے تفتیش مکمل کرلی گئی ہے اور دوسرے اسیران سے بھی تحقیقات مکمل کرنے کے بعد انہیں مختلف جیلوں میں قید تنہائی میں منتقل کیا گیا تھا۔

فلسطینی محکمہ امور اسیران کی طرف سے جاری ایک بیان میں  کہا گیا ہے کہ اسیر زکریا الزبیدی کو بئر سبع کے ایچل جیل میں قید تنہائی میں ڈالا گیا تھا۔

اسیران کے وکیل محاجنہ نے بتایا کہ آئندہ اتوار کو اسرائیلی فوجی عدالتوں میں  چھ فلسطینی قیدیوں کو پیش کیا جائے گا۔

خیال رہے کہ چھ فلسطینی چھ ستمبر کو اسرائیل کی جلبوع جیل سے سرنگ کے ذریعے فرار ہوگئے تھے تاہم چند روز کی تلاش اورتعاقب کے بعد قابض اسرائیلی فوج نے انہیں دوبارہ گرفتار کرلیا تھا۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close