دنیا

جی سیون کو دنیا کے بارے میں فیصلے کرنے کا حق نہیں، چین

شیعیت نیوز: جی سیون کو چين نے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ اب وہ دن گزر گئے جب چند ملکوں کا ایک گروہ دنیا کی تقدیر کا فیصلہ کیا کرتا تھا اور اب اس کام کی بالکل اجازت نہیں دی جائے گی۔

چین نے جی سیون کو متنبہ کیا ہے کہ وہ دن ختم ہو چکے ہیں جب چھوٹے ممالک کے گروپ دنیا کی قسمت کا فیصلہ کرتے تھے۔

اطلاعات کے مطابق چین نے اپنے اس بیان کے ذریعے ان 7 امیر ترین ممالک کو نشانہ بنایا جنہوں نے اس کا مقابلہ کرنے کے لیے اکٹھے کام کرنے کا عندیہ دیا ہے۔

برطانیہ میں چینی سفارت خانے کے ترجمان کا کہنا تھا کہ ماضی میں دنیا کے فیصلے چھوٹے چھوٹے ممالک کا ایک گروہ کرلیا کرتا تھا لیکن وہ دن اب گزر چکے ہیں۔

چین کا کہنا ہے کہ تمام ملک چاہے وہ چھوٹے ہوں یا بڑے، کمزور ہوں یا طاقتور، امیر ہوں یا غریب، تمام معاملات کو سب کی مشاورت سے چلایا جانا چاہیے۔

چین نے دو ٹوک لفظوں میں کہا ہے کہ چھوٹے ممالک کے وضع کردہ نام نہاد اصول نہیں بلکہ اقوام متحدہ کے اصولوں پر مبنی بین الاقوامی آرڈر واحد جائز عالمی نظام ہے۔

واضح رہے کہ جی سیون نے چین کا مقابلہ کرنے کے لئے 40 ٹریلین ڈالر کی رقم مخصوص کئے جانے کا فیصلہ کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیں : شدت پسند وزیراعظم نیتن یاھو کا 12 سالہ خونی اقتدار کا دور اختتام پذیر

دوسری جانب جی سیون کے رکن ممالک اسرائیل کی نسل پرست اور بچوں کی قاتل حکومت کی حمایت بند کردیں۔

فارس نیوز ایجنسی کی رپورٹ کے مطابق برطانیہ کے دارالحکومت لندن میں فلسطین کی حمایت میں ایک بڑا مظاہرہ ہوا۔

اطلاعات کے مطابق جی سیون کے سربراہی اجلاس کے موقع پر برطانوی شہریوں نے ملت فلسطین کے ساتھ اپنی یکجہتی کا اظہار کیا۔

جی سیون کے سربراہی اجلاس کے مقام پر ہونے والے اس مظاہرے کے شرکا نے ہاتھوں میں فلسطین کے پرچم اور پلے کارڈ اٹھائے ہوئے تھے، جن پر غزہ کے محاصرے کے خاتمے اور فلسطین کی آزادی کی حمایت میں نعرے درج تھے۔

برطانوی شہریوں نے اس موقع پر اسرائیل مردہ باد کے بھی نعرے لگائے اور جی سیون کے رکن ملکوں کے سربراہوں سے مطالبہ کیا کہ نسل پرست اور بچوں کی قاتل صیہونی حکومت کی حمایت کرنا بند کردیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close