اہم ترین خبریںدنیا

شدت پسند وزیراعظم نیتن یاھو کا 12 سالہ خونی اقتدار کا دور اختتام پذیر

شیعیت نیوز : اسرائیل میں شدت پسند وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو 4456 دن حکومت کے بعد گذشتہ روز اقتدار سے رخصت ہوگئے۔

شدت پسند وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو کا بارہ سالہ دور حکومت خونی دور قرار دیا جاتا ہے جس میں انہوں نے فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی پرکئی بار وحشیانہ جنگ مسلط کی اور فلسطین کے دوسرے علاقوں میں نہتے فلسطینیوں پر بدترین مظالم ڈھائے۔

کل اتوار کو اسرائیل کی نئی مخلوط حکومت نے کنیسٹ میں اعتماد کا ووٹ لیا اور عہدے کا حلف اٹھایا۔

اسرائیل کے عبرانی اخبار’یدیعوت احرونوت‘ کی رپورٹ کے مطابق اگر کوئی ڈراما تبدیلی نہ ہوئی تو مقامی وقت کے مطابق اتوارکو شام چار بجے نئی حکومت اپنے عہدے کا حلف اٹھا  لے گی۔

اس کے بعد نئی حکومت کے سربراہ نفتالی بینیٹ عہدے کا چارج سنھبال لیں گے۔ اس طرح نیتن یاھو کا بارہ سال دور حکومت اپنے اختتام کو پہنچ جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں : پانچ سو امریکی صحافیوں کا اسرائیلی جرائم بے نقاب کرنے کا مطالبہ

عبرانی اخبار کے مطابق ’بینیٹ‘ رات نوبجے کنیسٹ سے رائے شماری مکمل کرانے کے بعد اجلاس منعقد کریں گے۔ اجلاس میں صدر روئوف ریفیلین اور سپریم کورٹ کےچیف جسٹس اسٹر حیوٹ بھی شرکت کریں گے۔

یدیعوت احرونوت کے مطابق نئے حکومتی اتحاد میں شامل جماعتوں کا کنیسٹ میں بند کمرہ اجلاس ہوگا۔ اس کے بعد اگلے روز چار بجے حکومت میں شامل وزرا کی الگ الگ حلف برداری ہوگی۔

یاد رہے کہ سابق وزیراعظم نیتن یاہو مہلت کے دوران اسمبلی میں اکثریت ثابت کرنے میں ناکام ہوگئے تھےاوراپوزیشن جماعتوں کے اتحاد نے وزیراعظم نیتن یاہو سے غزہ میں بمباری کے بعد سے دوری اختیار کرنا شروع کردی تھے۔

واضح رہے کہ سابق وزیراعظم بن یامین نیتن یاہو کی مبینہ بدعنوانی کے تعلق سے ان کے مخالفین انہیں کرپٹ وزیراعظم کہہ کر مخاطب کرتے تھے اور پچھلے ایک سال کے دوران ان کے خلاف بڑے پیمانے پرتشدد مظاہرے بھی ہوتے رہے ہیں۔

ٹیگز

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close