اہم ترین خبریںپاکستان

شیعہ مخالف فتویٰ بازخودساختہ مفتی اعظم ADCفیصل آباد ایوب بلوچ کے خلاف ڈپٹی کمشنرنے بڑا قدم اٹھا لیا

اس مذکورہ بیان کی ویڈیو سوشل میڈیا پر تیزی سے وائرل ہونے پر ملت جعفریہ کی جانب سے شدید ردعمل سامنے آیا تھا اور حکومت و ریاست سے اس نا اہل اور متعصب سرکاری افسر کے خلاف فوری ٹھوس کارروائی کا مطالبہ شدت سے سامنے آرہاتھا۔

شیعیت نیوز:شیعیان حیدرکرارؑ کا غم وغصہ کام کرگیا، مفتی اعظم بننے کی کوشش اور شیعہ مخالف فتویٰ بازی میں مصروف ADCفیصل آباد ایوب بلوچ کے خلاف ڈپٹی کمشنر ضلع فیصل آباد زاہد حسین نےبڑا قدم اٹھا لیا۔ شیعہ مکتب فکر پر نقطہ چینی اور تکفیر کرنے پر ایڈیشنل کمشنر فیصل آباد ایوب بلوچ کو معطل کردیا گیاباقائدہ نوٹیفکیشن جاری ۔

تفصیلات کے مطابق ڈپٹی کمشنر ضلع فیصل آباد نے فرقہ وارانہ منافرت پرمبنی گفتگو کرنے اور مسلمہ مسلک اہل تشیع کے مذہبی جذبات کو مجروح کرنے والے ایڈیشنل کمشنر فیصل آباد ایوب بلوچ کے خلاف فوری ایکشن لیتے ہوئے انہیں ذمہ داریوں سے فوری برطرف کردیا ہے ۔

ڈی سی آفس سے جاری نوٹیفکیشن میں انہوں نے کہا ہے کہ ڈویژنل پبلک اسکول میں عوامی تقریب کے دوران متنازعہ تقریر کرنے کے سبب ایڈیشنل کمشنر فیصل آباد ایوب بلوچ کو ان کے فرائض سے سبکدوش کیا جارہا ہے ۔

یہ بھی پڑھیں: شیعہ مکتب فکر کی تکفیر کرنے والے ایڈیشنل کمشنر فیصل آباد ایوب بلوچ کے خلاف فوری کارروائی عمل میں لائی جائے، علامہ عبد الخالق اسدی کا مطالبہ

نوٹیفکیشن میں ہدایت جاری کی گئی ہیں کہ وہ ضلع فیصل آباد میں اپنے اختیارات کا چارج فوری چھوڑ دیں وہ مزید اس ضلع میں اپنی ڈیوٹی انجام نہیں دے سکتے ، پنجاب حکومت ان کی دوسری جگہ تعیناتی کے لیئے فوری نوٹیفکیشن جاری کرے۔

واضح رہے کہ گذشتہ روز ایڈیشنل کمشنر فیصل آباد ایوب بلوچ نے ڈویژنل پبلک سکول فیصل آباد میں منعقدہ سیرت کانفرنس سے اپنےخطاب میں شیعہ مسلک کے دو نمازیں ملا کر پڑھنے پر تنقید کی اور یہ جملہ کہا کہ۔۔۔”ایک تو کفر پھر اس پر جواز بھی پیش کرتے ہیں”یہ بھی ارشاد فرمایا کہ” نماز مقرر وقت پر پڑھنے کی آیت محکمات میں ہے متشابہات میں نہیں۔ پھر ایک ایسا مسلک بھی ہے جو پتہ نہیں کہاں سے دلیلیں پیش کرتا ہے ملا کر نمازیں پڑھنے کی۔ حالانکہ یہ صرف حج کے موقع پر اجازت ہے”۔

یہ بھی پڑھیں: ایڈیشنل کمشنر فیصل آباد ایوب بلوچ مفتی اعظم بن گیا،شیعہ مکتب فکر کےخلاف فتویٰ بازی

اس گفتگو میں انہوں نے کھلم کھلا شیعہ مکتب فکر پر تنقید کی اور اس کی تکفیر بھی کی۔ اس مذکورہ بیان کی ویڈیو سوشل میڈیا پر تیزی سے وائرل ہونے پر ملت جعفریہ کی جانب سے شدید ردعمل سامنے آیا تھا اور حکومت و ریاست سے اس نا اہل اور متعصب سرکاری افسر کے خلاف فوری ٹھوس کارروائی کا مطالبہ شدت سے سامنے آرہاتھا۔

 

 

متعلقہ مضامین

Back to top button
Close